خواجہ اظہار پر حملہ: حساس اداروں نے اہم کامیابی حاصل کرلی

پولیس اور حساس اداروں کے اہلکاروں نے گزشتہ روز کوئٹہ ٹاؤن، سچل کے علاقے صدف کالونی میں کارروائی کی ۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ حساس اداروں نے گزشتہ روز کوئٹہ ٹاؤن میں مقابلے کے بعد اہم کامیابی حاصل کی ہے۔

اس سے قبل ایس ایس پی ملیر راؤ انوار کا کہنا تھا کہ صدف کالونی میں کارروائی کے دوران 4 دہشت گرد مارے گئے تھے جن میں مطلوب دہشت گرد ملا فضل اللہ کا کزن خورشید بھی شامل تھا۔

راؤ انوار کا کہنا تھا کہ دہشت گرد خورشید پاک فوج اور نوبل انعام یافتہ پاکستانی ملالہ یوسفزئی پر حملے کا ملزم بھی ہے جب کہ دہشت گرد خورشید قائد آباد پولیس پر بم حملے میں بھی ملوث تھا۔

پولیس نے گزشتہ روز سہراب گوٹھ کے علاقے کنیز فاطمہ سوسائٹی میں کارروائی کی تو وہاں ایک مکان میں چھپے دہشت گردوں نے پولیس پر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں ایک اہلکار جاں بحق اور دوسرا زخمی ہوا۔

پولیس کی کارروائی کے دوران خواجہ اظہار پر حملے کا مبینہ ماسٹر مائنڈ عبدالکریم سروش صدیقی زخمی حالت میں فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا تھا۔

مفرور ملزم سروش صدیقی جامعہ کراچی میں اپلائیڈ فزکس کا طالب علم تھا اور اس کے والد سجاد صدیقی ریٹائرڈ پروفیسر ہیں۔

خیال رہے کہ 2 ستمبر کو کراچی کے علاقے بفرزون میں نماز عید کے بعد گھر واپسی پر دہشت گردوں نے خواجہ اظہار پر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں ایک اہلکار اور ایک بچہ جاں بحق ہوگیا تھا۔
This entry was posted in قومی, اہم خبریں. Bookmark the permalink.