منرل واٹر کیس اپنے اختتام کو پہنچا : چیف جسٹس اور پرائیویٹ کمپنیوں کی جانب سے وکیل اعتزاز احسن کے مابین دلائل۔جانئے بادبان رپورٹ میں۔

 بادبان رپورٹ: چیف جسٹس کی زیر سربراہی منرل واٹر کمپنیوں کا زیر زمین بے دریغ پانی نکالنے کے کیس کی سماعت ہوئی۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ بڑے شہروں میں زیر زمین پانی ختم ہو چکا ہے اور زمین بنجر ہو گئی ہے۔ پرائیویٹ کمپنیوں کی جانب سے وکیل اعتزاز احسن نے کہا کہ یہ سن کر میرا دل دُکھ سے بھر گیا ہے اور ملک کے لئے دل رو رہا ہے کہ یہ پاکستان اور پاکستان کی عوام کے ساتھ نا انصافی اور ظلم ہو رہا ہے لیکن اس کے بارے میں کوئی لاء یا قانون نہیں اس لئے پرائیویٹ کمپنیوں کو کچھ کہا نہیں جا سکتا ۔ اس پر چیف جسٹس نے کہا کہ لوگ آپ کی عزت کرتے ہیں اور آپ سے پیار کرتے ہیں اور آپ بھی اس ملک کا درد دل میں رکھتے ہیں ۔  چیف جسٹس نے کہا کہ ایک ہفتے میں منرل واٹر ٹیکس کی مکمل رپورٹ بنا کر پیش کی جائے تاکہ اس کا قانون پاس کرایا جائے اور منرل واٹر کمپنیوں سے ٹیکس لے کر زیر زمین پانی کے اوپر پیسہ لگایا جائے۔