نواز شریف کا قافلہ جہلم سے لاہور کی جانب گامزن

سابق وزیراعظم کے قافلے نے گزشتہ روز راولپنڈی سے جہلم تک کا سفر کیا اور آج تیسرے روز ریلی لاہور کی جانب سفر طے کر رہی ہے جب کہ ذرائع کا کہنا ہے کہ نواز شریف آج گوجرانوالہ میں قیام کریں گے اور کل لاہور پہنچیں گے۔ سابق وزیراعظم نواز شریف براستہ کھاریاں، لالہ موسیٰ، گجرات، وزیرآباد، گوجرانوالہ، کامونکی اور شاہدرہ سے ہوتے ہوئے لاہور پہنچیں گے اور اس موقع پر مختلف مقامات پر استقبالیہ کیمپوں میں جمع ہونے والے کارکنان سے خطاب بھی کریں گے۔ میاں نوازشریف کی ریلی کے لیے سیکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کیے گئے ہیں، پولیس کمانڈوز سمیت دیگر قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکار ان کی گاڑی کے اطراف تعینات ہیں۔ جہلم میں خطاب اور قیام: جہلم پہنچنے پر کارکنان سے خطاب کرتے ہوئے سابق وزیراعظم نے کہا کہ منتخب وزیراعظم کو ایک منٹ میں پانچ معزز ججوں نے فارغ کردیا، کیا یہ توہین عوام کو برداشت ہے، ججوں نے بھی کہا کہ نواز شریف نے کرپشن نہیں کی، آپ کو پوچھنا چاہیے جب نواز شریف نے کرپشن نہیں کی تو انہیں منصب سے کیوں ہٹایا۔ نواز شریف نے کارکنان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ نے مجھے اسلام آباد بھیجا اور اسلام آباد والوں نے مجھے گھر بھیجا ہے،  آپ ووٹ دے کر وزیراعظم بناتے ہیں اور کوئی ڈکٹیٹر یا جج آکر آپ کے ووٹ کی پرچی پھاڑ کر ہاتھ میں دے دیتا ہے، یہ وزیراعظم کی نہیں پاکستان کے عوام کی توہین ہے۔ سوہاوا پہنچنے پر مختصر خطاب اس سے قبل سوہاوا پہنچنے پر اپنے مختصر خطاب میں سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ نواز شریف پر کوئی کک بیک اور کرپشن کا کیس نہیں ہے، آپ نے مجھے وزیراعظم بنایا اور 5 معزز ججوں نے گھر بھجوا دیا کیا یہ منظور ہے، یہ منتخب وزیر اعظم کی نہیں بلکہ ووٹروں اور 20 کروڑ عوام کی توہین ہے۔ سابق وزیراعظم نے کہا کہ 70 سال سے قوم کی توہین کی جاتی رہی ہے، انشااللہ اس روایت کو بدلیں گے اور اس ملک اور عوام کی تقدیر بدلیں گے، میں اپنی نا اہلی کا نہیں آپ کی نا اہلی کا مقدمہ لے کر نکلا ہوں۔
This entry was posted in قومی, اہم خبریں. Bookmark the permalink.