چئیرمین قائمہ کمیٹی برائے داخلہ سینیٹر رحمان ملک کا وزارت داخلہ کو 41 سوالات پر مشتمل خط۔ وزارت داخلہ، آئی جی پولیس اور ہوم سیکرٹری پنجاب سے 41 سوالات کے جوابات 25 جنوری تک کمیٹی کو جمع کرے۔ اِن کاؤنٹر کا قانون و آئین میں کوئی حیثیت نہیں ہے، انکا خاتمہ ضروری ہے۔ سینیٹر رحمان ملک۔ تفصیلات جانئے بادبان رپورٹ میں۔

چئیرمین قائمہ کمیٹی برائے داخلہ سینیٹر رحمان ملک کا وزارت داخلہ کو 41 سوالات پر مشتمل خط

چئیرمین قائمہ کمیٹی برائے داخلہ سینیٹر رحمان ملک نے 41 سوالات پر مشتمل سوالنامہ سانحہ ساہیوال پر تیار کیا ہے۔

وزارت داخلہ، آئی جی پولیس اور ہوم سیکرٹری پنجاب سے 41 سوالات کے جوابات 25 جنوری تک کمیٹی کو جمع کرے۔ سینیٹر رحمان ملک

سینیٹ نے 21 جنوری کو رولنگ دیتے ہوئے قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کو سانحہ ساہیوال پر تحقیقات کی ذمہ داری سونپی ہے۔ سینیٹر رحمان ملک

سینیٹ نے قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کو سانحہ ساہیوال پر ایک ہفتے میں رپورٹ جمع کرنے کا کہا ہے۔ سینیٹر رحمان ملک

قائمہ کمیٹی برائے داخلہ 25 جولائی کے اجلاس میں پنجاب حکومت کی جی آئی ٹی رپورٹ کا جائزہ بھی لے گے۔ سینیٹر رحمان ملک

سانحہ ساہیوال کے ذمہ داروں کو قرار واقعی سزا ملے تاکہ مستقبل میں ایسے واقعات رونما نہ ہو۔ سینیٹر رحمان ملک

اِن کاؤنٹر کا قانون و آئین میں کوئی حیثیت نہیں ہے، انکا خاتمہ ضروری ہے۔ سینیٹر رحمان ملک

سانحہ ساہیوال پر جوڈیشل کمیشن بنایا جائے، قائمہ کمیٹی نے جوڈیشل کمیشن بنانے کی سفارش کی ہے۔ سینیٹر رحمان ملک

قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کا سوالنامہ سانحہ ساہیوال کے آپریشن، سی ٹی ڈی اہلکاران و مقتولین کے تفصیلات پر ہیں۔ سینیٹر رحمان ملک