بہت تماشہ ہو گیا، دھرنے والے اب گھر جائیں: آصف زرداری

 

سابق صدر آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ روزانہ جلسہ کرنے والوں کے پاس فنڈز کہاں سے آرہے ہیں۔ ہم نے 18 اکتوبر کو ایک جلسہ کرنا ہے تو فنڈز کی فکر پڑی ہوئی ہے۔سابق صدر آصف علی زرداری کا پیپلز پارٹی سرگودھا ڈویژن کے اجلاس سے خطاب میں کہنا تھا کہ بھٹو ازم ہمارا فلسفہ ہے اور عام آدمی کی سیاست ہماری میراث ہے جس کی طرف باقی جماعتیں اب آ رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مجھے ہمیشہ عوام سے دور رکھا گیا۔ جیل میں بھی قید تنہائی میں رکھا گیا۔ پارٹی کارکنوں سے براہ راست رابطہ رکھنا چاہتا ہوں ،مڈل مین قبول نہیں ہے۔ سابق صدر کا کہنا تھا کہ 70 ایکڑ کے گھر میں رہ کر وی آئی پی کلچر ختم کرنے کی بات کی جا رہی ہے۔ سیاست اور کھیل میں فرق ہے۔ کھلاڑی کبھی سیاستدان اور سیاستدان کبھی کھلاڑی نہیں ہو سکتا۔ عمران خان بال ٹمپرنگ کر رہے ہیں۔ سیاست میں بال ٹمپرنگ نہ کی جائے۔ ٹمپرڈ بال سے اپنے بلے کے ساتھ اپنی پچ پر سیاست کا وقت نہیں ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ روزانہ جلسہ کرنے والوں کے پاس فنڈز کہاں سے آرہے ہیں۔ ہم نے 18 اکتوبر کو ایک جلسہ کرنا ہے تو فنڈز کی فکر پڑی ہوئی ہے۔ دھرنا ایک دبائو کا حربہ ہے، بہت تماشہ ہو گیا، اب یہ گھر جائیں۔ ان کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی عام انتخابات کے نتائج تسلیم کرنے سے انکار کر دیتی تو بڑا بحران پیدا ہو جاتا۔ بطور اپوزیشن ہم اور حکومت فیصلہ کریں گے الیکشن کب ہوں گے، ابھی ہم انتخابات نہیں چاہتے۔ اجلاس سے خطاب میں زرداری نے کہا کہ بلاول بھٹو تمام خطرات کو دیکھ کر سیاست کر رہا ہے تو ہمیں اس کا شکر گزار ہونا چاہیے۔ اپنے بچوں کو سیاست کےلئے فری ہینڈ دوں گا۔ آصفہ بھٹو آکسفورڈ یونیورسٹی میں لیکچر دینے جا رہی ہیں۔ واپس آکر وہ بھی سیاست کریں گی۔ انہوں نے کہا کہ تاریخ اور حقائق کو مسخ نہ کیا جائے۔ میرانشاہ کا دورہ کرنے والے محمد نواز شریف پہلے نہیں بلکہ تیسرے وزیراعظم ہیں۔ 1976ء میں ذوالفقار علی بھٹو اور 1996ء میں بے نظیر بھٹو میرانشاہ کا دورہ کر چکے ہیں۔

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.