ارفع کریم کو دنیا سے رخصت ہوئے تین برس بیت گئے

 

ارفع کریم کی تیسری برسی پر سول سوسائٹی نے شمعین روشن کرکے انہیں خراج عقیدت پیش کیا۔ ارفع کریم ٹاور لاہور میں سب سے کم عمر میں مائیکرو سافٹ پروفیشلسٹ کا اعزاز پانے والی ارفع کریم کی تیسری برسی پر شمعیں روشن کی گئیں۔ تقریب میں ارفع کریم کی والدہ اور بھائیوں کے ساتھ سول سوسائٹی کے لوگ بھی شریک ہوئے۔ شہریوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ جو خواب ارفع کریم نے دیکھا اس کی شمع کبھی بجھنے نہیں دیںگے۔ شرکاء کا کہنا تھا کہ پاکستان میں ٹلینٹ کی کمی نہیں ہے۔ تھوڑی لگن اور محنت سے اس مقصد پر کام جاری رہا توآئی ٹی کی دنیا میں پاکستان کا نام روشن کرنے کے لئے اور بہت سی ارفع کریم سامنے آئیں گی۔ خیال رہے کہ 9 برس کی عمر میں مائیکرو سافٹ سرٹیفائیڈ پروفیشنل امتحان پاس کرکے انفارمیشن ٹیکنالوجی کی دنیا میں تہلکہ مچا دینے والی ارفع کریم رندھاوا 2 فروری 1995ء کو ضلع فیصل آباد میں پیدا ہوئیں۔ اس نے کم عمری میں ہی سافٹ وئیر سرٹیفکیٹ حاصل کرکے عالمی شہرت حاصل کی۔ ارفع کریم رندھاوا کو دنیا کے امیر ترین شخص اور مائیکرو سافٹ کمپنی کے چیف ایگزیکٹو بل گیٹس نے ذاتی مہمان بنا کر امریکہ آنے کی دعوت دی اور مائیکرو سافٹ ہیڈ کوارٹرز کا دورہ کروایا۔ ارفع کریم رندھاوا اس وقت دنیا بھر میں پاکستان کی پہچان بن چکی ہیں۔ اسے کم عمری میں ہی پرائیڈ آف پرفارمنس سمیت متعدد اعزازات سے نوازا گیا۔ ارفع کریم کو 22 دسمبر 2011ء کو مرگی کا دورہ پڑا اور طبیعت زیادہ خراب ہونے پر اسے لاہور کے سی ایم ایچ ہسپتال میں داخل کروا دیا گیا جہاں وہ کومے کی حالت میں رہیں اور 14 جنوری 2012ء کو انتقال کر گئیں۔ –

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.