ڈاکٹروں کی کاوش کامیاب, سٹیم سیل ٹیکنالوجی کے ذریعے دل کی مرمت ممکن

 

ہسپانوی طبی ماہرین نے سٹیم سیل ٹیکنالوجی کو استعمال کرتے ہوئے ہارٹ اٹیک کے شکار سات مریضوں کے دلوں کو تندرست حالت میں واپس لانے میں کامیابی حاصل کر لی۔

میڈرڈ:  ہارٹ اٹیک اس وقت ہوتا ہے جب دل تک پہنچنے والی آکسیجن کی مقدار بہت کم ہو جاتی ہے جس کی وجہ اکثر بلڈ کلاٹ کے باعث دل تک پہنچنے والے خون میں کمی ہوتی ہے۔ دل کے دورے کے بعد مردہ ہو جانے والے پٹھوں کی جگہ زخم بھر جانے کے باعث داغ کی طرح کے ٹشو لے لیتے ہیں۔ ایسی حالت میں دل ایک صحت مند دل کی طرح کام نہیں کر سکتا اور اس کی کارکردگی متاثر ہوتی ہے جس سے جسم کو پمپ کیے جانے والے خون کی مقدار میں کمی واقع ہو جاتی ہے۔ ایسے مریض جنہیں دل کا ہلکا دورہ پڑا ہو وہ عام طور پر دوائوں کے سہارے ایک نارمل زندگی گزار سکتے ہیں تاہم وہ مریض جنہیں دل کا شدید دورہ پڑا ہو انہیں لمبے عرصے تک نہ صرف درد رہتا ہے بلکہ انہیں زندگی کے عام کام کاج کرنے میں بھی شدید دقت کا سامنا رہتا ہے اور وہ بہت جلد تھکن کا شکار ہو جاتے ہیں۔ دنیا بھر میں ڈاکٹرز ایسے طریقے ڈھونڈ رہے ہیں کہ دل کے متاثر ہو جانے والے ٹشوز کی جگہ صحت مند ٹشوز لے سکیں۔ اس مقصد کے لئے سٹیم سیل ٹیکنالوجی سے بھی مدد حاصل کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے تاہم اب تک مریض کے اپنے ہی سٹیم سیل کے ذریعے دل کو مرمت کرنے کی کوشش کی جاتی رہی ہے۔ ہسپانوی طبی ماہرین نے سٹیم سیل ٹیکنالوجی کو استعمال کرتے ہوئے ہارٹ اٹیک کے شکار سات مریضوں کے دلوں کو تندرست حالت میں واپس لانے میں کامیابی حاصل کر لی ہے۔ حکام کے مطابق یہ اپنی نوعیت کی اولین پیشرفت ہے۔ میڈرڈ میں واقع گریگوریو میرانونین ہسپتال اس تجرباتی ٹیکنیک کے ذریعے کل 55 مریضوں کا علاج کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔ یہ طریقہ علاج فی الحال کلینیکل ٹرائل کے مرحلے میں ہے۔ اس ہسپتال کا انتظام چلانے والی میڈرڈ کی علاقائی حکومت کی جانب سے ایک بیان میں کہا گیا ہے۔ اس ٹیکنیک کو استعمال کرتے ہوئے اب تک سات مریضوں کا آپریشن ہو چکا ہے اور ہارٹ اٹیک کے باعث دل کے ٹشوز بری طرح متاثر ہو جانے کے باجود ان مریضوں کی صورتحال اب بہت بہتر ہے۔ اس بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ یہ پہلا موقع ہے جس میں ’ایلوجینیئک سیلز‘ کو دل کے ایسے ٹشوز کو درست کرنے کے لئے استعمال کیا گیا ہے جو دل کے دورے یا ہارٹ اٹیک کے باعث بری طرح متاثر ہو گئے تھے۔ ایلوجینیئک ایسے سٹیم سیلز کہلاتے ہیں جو کسی دوسرے شخص سے حاصل کئے گئے ہوں۔

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.