داعش نے پیسے کیلیئے انسانی اعضاء کی فروخت شروع کر دی: عراق

 

جرمن نیوز ایجنسی سے باتیں کرتے ہوئے عراقی سفیر محمد علی الحکیم کا کہنا تھا کہ عراقی حکومت کو اجتماعی قبروں میں بہت سی ایسی لاشیں بھی ملی ہیں جن کی پشت پر شگاف تھے اور ان کے گردے یا دیگر اعضاء غائب تھے۔ الحکیم کے مطابق حکومت نے اسلامک اسٹیٹ کو کی جانے والی ایسی فون کالز بھی سنی ہیں جن میں جسمانی اعضاء کے لیے کہا جا رہا تھا۔ ہمیں کچھ مسخ شدہ لاشیں ملی ہیںا ن کے جسم کے کچھ حصے غائب تھے۔ جسمانی عضو آخر کیوں غائب ہو گا؟ یہ پیسے کے حصول کا ایک اور ذریعہ ہے۔ اقوام متحدہ میں عراقی سفیر الحکیم نے یہ بھی بتایا کہ گزشتہ چند ہفتوں کے دوران بالخصوص موصل کے علاقے میں کم از کم دَس ڈاکٹروں کو انسانی جسموں سے اعضاء نکالنے سے انکار کرنے پر قتل کیا جا چکا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ابھی بغداد حکومت ان افراد کے بارے میں ڈیٹا جمع کرنے کا عمل جاری رکھے ہوئے ہے جن کے اعضاء نکالے گئے۔ اِسی طرح یہ بھی جاننے کی کوشش کی جا رہی ہے کہ ان کی موت کن حالات میں ہوئی۔ الحکیم نے کہا: وہ لاشیں ہمارے پاس ہیں آپ آئیں اور جانچیں۔ واضح طور پر نظر آتا ہے کہ ان کے جسمانی اعضاء غائب ہیں۔ عراقی سفیر محمد علی الحکیم نے عالمی سلامتی کونسل کو اس سلسلے میں تفصیلات بتاتے ہوئے آئی ایس کے جنگجووں پر یہ الزم بھی عائد کیا کہ وہ عراقی آثارِ قدیمہ کو بھی بیرونِ ملک اسمگل کرتے ہوئے پیسہ بنا رہے ہیں۔ ابھی گذشتہ ہفتے عالمی سلامتی کونسل نے ایک قرارداد منظور کی تھی جس کا مقصد اس امر کو یقینی بنانا تھا کہ عراق اور شام میں سرگرم اسلامک اسٹیٹ اور باغی النصرہ فرنٹ کو مالی وسائل کی فراہمی روکی جائے۔ اس کے لیے معدنی تیل کی غیر قانونی برآمدات، ثقافتی ورثے کی غیر قانونی تجارت، تاوان کی ادائیگی اور انتہاء پسند گروپوں کے لیے جانے والے عطیات کا راستہ روکنے کے لیے اقدامات تجویز کیے گئے تھے۔

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.