پٹرول کی قیمت میں تین روپے 97 پیسے فی لٹر اضافے کا امکان

 

عالمی منڈی میں اضافے اور جی ایس ٹی کی شرح بڑھانے کے باعث سات ماہ سے جاری پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کا سلسلہ رک جائے گا۔ یکم مارچ سے قیمتوں میں ساڑھے چار فی لٹر تک اضافے کا امکان ہے۔ آئندہ ماہ سے ہائی اسپیڈ ڈیزل کے علاوہ تمام مصنوعات مہنگی ہوں گی۔ پٹرول کی قیمت میں 3 روپے 97 پیسے فی لیٹر اضافے کا امکان ہے جس کے بعد قیمت 70 روپے 29 پیسے سے بڑھ کر 74 روپے 26 پیسے ہو جائے گی۔ ہائی آکٹین کی قیمت 80 روپے 31 پیسے سے بڑھ کر 84 روپے 81 پیسے پر پہنچ جائے گی جس میں ساڑھے چار روپے فی لٹر اضافے کی تجویز ہے۔ مٹی کا تیل 2 روپے 67 پیسے فی لیٹر مہنگا ہوگا جس کے بعد قیمت 61 روپے 44 پیسے سے بڑھ کر 64 روپے 11 پیسے ہو جائے گی۔ لائٹ ڈیزل کی قیمت 57 روپے 94 پیسے سے بڑھ کر 60 روپے 55 پیسے پر پہنچ جائے گی جس میں 2 روپے61 پیسے فی لیٹر اضافہ تجویز کیا گیا ہے۔ دیگر مصنوعات کے برعکس ہائی اسپیڈ ڈیزل کی قیمت میں 3 روپے فی لیٹر تک کمی متوقع ہے جس کے بعد قیمت 80 روپے 61 پیسے سے کم ہو کر 77 روپے 61 پیسے پر آجائے گی۔ ذرائع کے مطابق قیمتوں میں اضافہ پٹرولیم مصنوعات پر جی ایس ٹی کی شرح بڑھائے جانے اور عالمی منڈی میں ہونے والے اضافے کے باعث کیا جا رہا ہے۔ گزشتہ دو ماہ کے دوران پٹرولیم مصنوعات پر جی ایس ٹی 17 سے بڑھا کر 27 فیصد کر دیا گیا ہے۔ اعدادوشمار کے مطابق اگست دو ہزار چودہ سے ملک میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کا سلسلہ جاری تھا جو سات ماہ کے بعد ٹوٹنے کا امکان ہے۔

 

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.